ابلاغ کا سپاہی کس موڑ پر جو خطروں سے کھیل کرآگ کے دریا سے خبر نکال لاتا ہے

زبیر احمد